Health Articles

What is Rabies – Crazy Dog Bites

Rabies is a deadly disease. It is caused by the bites of some pets and wild animals. The rabies virus is found in the saliva of these animals. Such as dogs, cats, girders, wolves, bats, raccoon and fox. There are other breastfeeding animals. Every year more than 55,000 people die from the disease.
Ninety percent of people have the disease from pets. Those who do not get vaccinated vaccines can also have a minor rash. Rabies Treatment Vaccine & Symptoms
Once the symptoms of the disease appear, it usually occurs within 72 hours. And that death is certain. An animal that has rabies will usually die within ten days. Rabies – Crazy Dog Bites.
So if possible, if the bite is kept under surveillance for ten days, if it dies during that time, it will be rebounded.

And the person who gets bitten will have to be vaccinated. New research has shown that sometimes animals have the virus, but they survive for a long time, so if someone cuts an animal, they should get vaccinated immediately. The animal does not have any symptoms of the disease. The symptoms of rabies in the animal are characterized by changes in their habits, either silencing or not eating food.

He is afraid of the water. Or he runs out of anger with everyone. He has no tricks and sometimes some parts of his body become paralyzed. Whenever an animal is suspected of rabies. He should sleep to deathless painfully so that he cannot beat anyone. Rabies – Crazy Dog Bites.

Symptoms in humans: It usually takes 2 to 8 weeks from the time the animal is cut to appear, sometimes it can last from ten days to 2 years.
The closer the wound is to the brain, the more visible the symptoms will be. Even if the patient is a baby, the appearance of the symptoms will be immediate. When a virus reaches the brain or forbids it, it is impossible to survive. It may take ten to fifty days for the virus to reach the brain (in the last few years).
Symptoms can be as follows:

1- Flow type effects, sore throat
2. Irritability and stiffness in the body, weakness.
3- Highly stirring and protesting behavior.
4. Strange thoughts, confusion – unusual physical movements
5. The severity of the injury – severe fatigue
6. Body weakness or paralysis
7. LAB – Religious abuse
8. Cough – headache, fever
9. To be afraid of water and air and move away.

Can’t swallow anything

This is a 1984 case. Registrar of TMC and Dr. Abdullah Shah Sahib of Lady Reading Hostel of Peshawar Pakistan. He had to write a research paper for his FCPS exam. With the advice of Al Khan, he decided to research rabies patients. So he started working on these patients and collecting material. Rabies – Crazy Dog Bites.
Patients who also came after the symptoms started, whether they had or did not receive the vaccine. They all died. Then, with the help of the newspapers and the health department, all the districts of the NWFP (now KP), especially Doctors reported that anyone who had a mad dog arrived at the Lady Reading Hospital’s Dry A unit soon. Besides, Malik Akhtar, the owner of the drugstore drug medico, was contacted to report a large amount of rabies vaccine. Keep it.

Then a large number of patients started coming. And they were regularly assigned to a full course of duty or a vaccine made in Switzerland. It was soon learned that patients who applied the vaccinated vaccine on time were saved and created by the Islamabad Institute of Health. The vaccine was administered in government hospitals. None of them survived.

It was not known if there was a defect in the domestic vaccine or it was inaccessible due to lack of proper temperature (nowadays the vaccine is coming from India. We do not know its efficacy or not.). The poor patients were helped with the funds set up in the unit. Rabies – Crazy Dog Bites.

Eight patients came together from another bun. There were also children. They were leaving the mosque of their village after the Fajr prayer that a wolf appeared from the front.
The beast attacked and killed eight of them. Fortunately, these people came to Lady Reading Hospital on time and got vaccinated.
And by the grace of God, they were all saved. They said that the wolf was killed. Dr. Shah Sahib had told him the day before that the wolf’s head was shaved.
So soon this happened. I had to find out if he was a wolf rider.

So, with his head in the sack, a letter was sent to the Health Institute of Islamabad along with a letter from the unit’s officer, Dilbar. Police stopped him at the site of the incident. An officer pointed to the sack and asked. What’s in it? “Dilbar said.” The head of the wolf. “The official said angrily” You want us “,” Dilbar said. “You see.”
An officer proceeded.
Opening the mouth of the bag, then screaming and running back. So Dilbar reached Islamabad. Later, according to the institute’s report, the wolf’s brain was filled with Negri Badinar. That is, he had rabies. Rabies – Crazy Dog Bites.

Another incident is also noteworthy. These days the governor of the province was Fazal Haq Sahib. One of his friends had the Khan of Raju Char Sada.
The mad dog had been bitten. The friend had also been vaccinated with the domestic vaccine. In the meantime, Dracula entered the unit. He died the next day.

Letter from the Governor to Lady Reading Hospital MS Dr. Jamil Ahmed Sahib that my friend is following. I came to the hospital and died the next day. What was the reason for this? ”Professor unit of the response unit wrote.

About rabies and the fact that in the municipality of every major city under the British government, a person was destined to kill a wandering dog and he was paid a price for strychnine and a pesticide. Dogs were mixed and that led to their death. Nowadays, people put the money in their pockets and serve in the puppy officers’ homes.

The Governor issued orders in this regard and the bodies of wandering dogs were seen in the streets of Peshawar. This continued for a few weeks and then the usual situation came to the first Dagger.
Caution:
Try to spread the necessary information about rabies to all the people. Do you know if this attempt will save someone’s life? Rabies – Crazy Dog Bites.
Eliminate stray dog ​​cats from your area.

Strap your pets around your neck. Keep them indoors but not outside. If you want to carry them out of the house, put a rope around your neck and keep it under your control.
Get your pet vaccinated by a wealthy country. If your job is to work with animals, get yourself vaccinated.
There is not much work on vaccines for mixed breeds (such as those born of dogs and wolves).
So don’t bother them. Bloody dogs often bite their owners too.

Avoid touching dead animals. Touching dead birds also causes rabies.
If a suspected animal is bitten, wash the wound thoroughly with soap and water and then a few times, then apply the vaccine immediately, even if the wound is in the form of a rash.
The virus is in the saliva of the animal. Therefore, it may also be a risk to lick it.
The sooner the vaccine is applied, the better it will be, but even if it is delayed for a few days, you should apply.
Keep the rabid animal closed.

If it dies within ten days, there was a rabid. If left untreated, the risk is not eliminated because according to new research, some rabid animals can survive for a long time, so each bite can be killed. Rebid, sauces if it does not have an effective vaccine. Rabies – Crazy Dog Bites.

Vaccine: Nothing can be certain about the efficacy of domestic and Indian vaccines. Therefore, only use vaccines made from France or Switzerland – if kept at the correct temperature.
For adults and children, the volume is the same. The elderly place the upper part of the needle in the deltoid and the infants in the front and back of the thigh.

Usually, it takes four injections. The first day, then the seventh. On the 8th and the eighth day, the first day should also be injected with the immuno-globulin. If it seems close to the wound, there is nothing left. Give up
In the end,
I request all Pakistanis to spread the knowledge about rabies to as many people as possible. And the government, the state of health, the system and the media should all work together to ensure that no human lives are lost from rabies. And the disease will be eradicated from our country. Rabies – Crazy Dog Bites.

یہ ایک مہلک بیماری ہے ۔جو انسانوں کو بعض پالتو اور جنگلی جانوروں کے کاٹنے سے ہو جاتی ہے۔رے بیز کا وائرس ان جانوروں کے منہ کے لعاب میں پایا جاتا ہے۔جیسے کتے، بلیاں،گیڈر،پھیڑیا ،چمگادڑ،رکون لومڑی اور کچھ دوسرے دودھ پلانے والے جانور ہیں۔ہر سال دنیا میں 55,000سے زیادہ افراد اس بیماری سے مرتے ہیں۔ننانوے فی ٓصد لوگوں کو یہ مرض پالتو جانوروں سے ہوتا ہے۔جن کو حفاظتی ٹیکے نہیں لگے ہوتے۔ایک معمولی خراش بھی اس کا باعث بن سکتی ہے۔
ایک دفعہ اس مرض کی علامات ظاہر ہو جائیں تو اکثر72گھنٹوں کے اندر اس کی موت واقع ہو جاتی ہے ۔اور یہ موت یقینی ہوتی ہے۔ جس جانور کو رے بیز ہو جائے۔وہ عموماً دس دن کے اندر مرجاتا ہے ۔

اس لئے اگر ممکن ہوتو کاٹنے والے جانور کو دس دن تک نگرانی میں رکھا جانے اگر اس دوران وہ مرجائے تو وہ ریبڈ ہو گا۔

اور کاٹے جانے والے فرد کو ویکسین لگانا پڑے گی۔نئی ریسرچ سے معلوم ہوا ہے کہ بعض دفعہ جانور کی تھوک میں وائرس ہوتا ہے مگر وہ خود بہت عرصہ تک زندہ رہتے ہیں۔چنانچہ اب اگر کسی کو کوئی جانور کاٹے تو فوراً ویکسین لگا لینی چاہئے۔چاہے جانور میں بیماری کی علامات نہ ہوں۔جانور میں رے بیز کی علامات میں اس کی عادات میں تبدیلی نمایاں ہوتی ہے یا تو وہ خاموش ہو جاتا ہے یا خوراک نہیں کھاتا۔پانی سے ڈرتا ہے ۔یا غضب ناک ہو کر ہر ایک کوکاٹنے کو دوڑتا ہے ۔اس کی چال ہیں تو ازن نہیں رہتا اور بعض دفعہ اس کے جسم کے بعض حصے مفلوج ہو جاتے ہیں ۔جب بھی کسی جانور پر ری بیز کا شک ہو تو اُسے کسی کم تکلیف دہ طریقے سے موت کی نیند سلادینا چاہئے تاکہ وہ کسی کوکاٹ نہ سکے۔
انسانوں میں علامات:۔جانور کے کاٹنے سے علامات کے ظاہر ہونے تک عموماً 2سے 8ہفتے لگتے ہیں کبھی کبھی یہ دورانیہ دس دن سے 2سال تک بھی ہو سکتا ہے۔زخم دماغ سے جتنا نزدیک ہو گا۔علامات اُتنی جلدی ظاہر ہونگی زخم بڑا ہویامریض بچہ ہو تو بھی علامات کا ظہور جلدی ہو گا۔جب وائرس دماغ یا حرام مخز تک پہنچ جائے تو بچنا ناممکن ہوتا ہے ۔(آج تک دنیا میں چند ہی افراد اس بیماری سے شفایاب ہو سکے ہیں ۔وہ بھی گزشتہ چند سالوں میں)دماغ تک وائرس کو پہنچنے میں دس سے پچاس دن لگ سکتے ہیں۔
علامات مندرجہ ذیل ہو سکتی ہیں۔
1۔فلو کی قسم کے اثرات ،گلے میں درد
2۔چڑ چڑاپن اورمزاج میں سختی،خصیلاپن۔
3۔زیادہ ہلنا جلنا اور احتجاجی رویہ۔
4۔عجیب خیالات ،اور الجھن۔غیر معمولی جسمانی حرکات
5۔عضلات کی سختی۔سخت تھکن
6۔جسمانی اعضاء کی کمزوری یا فالج
7۔لعاب ۔دین کی زیادتی
8۔قے۔سردرد ،بخار
9۔پانی اور ہوا سے ڈرنا اور دور ہ پڑجانا۔کچھ نگل نہ سکنا۔
یہ واقعہ1984ء کا ہے۔پشاور پاکستان کے لیڈی ریڈنگ ہاسٹل کے ڈریکل ”اے“یونٹ کے رجسٹرار اور ٹی ایم اور ڈاکٹر عبداللہ شاہ صاحب تھے۔ان کو اپنے ایف سی پی ایس امتحان کے لئے ایک ریسرچ پرچہ لکھنا تھا۔انہوں نے اپنے پروفیسر ڈاکٹر الف خان کے مشورہ سے فیصلہ کیا کہ وہ رے بیز کے مریضوں پر ریسرچ کریں گے۔چنانچہ انہوں نے اُن مریضوں پر کام کرنا اور مواد اکٹھا کرنا شروع کیا۔جو مریض بھی علامات شروع ہونے کے بعد آتے تھے۔چاہے انہوں نے ویکسین کرائی ہو یا نہ کرائی ہو ۔وہ سب مرجاتے تھے۔تب انہوں نے اخبارات اور محکمہ صحت کی مدد سے صوبہ سرحد (اب کا کے پی)کے تمام اضلاع میں خصوصاً ڈاکٹروں میں یہ اطلاع کرائی کہ جس شخص کو بھی پاگل کتا کاٹے وہ جلد لیڈی ریڈنگ ہسپتال کی ڈریکل اے یونٹ میں پہنچے۔

اس کے علاوہ دوائیوں کی بڑی دوکان میڈیکوزکے مالک ملک اختر سے رابطہ کیا گیا کہ وہ رے بیز کی اسپوڑٹڈ ویکسین بڑی مقدار میں پاس رکھیں۔تب بڑی تعداد میں مریض آنے لگے۔ اور ان کو باقاعدگی سے فرائض یا سوئٹزرلینڈ کی بنی ہوئی ویکسین کا مکمل کورس لگایا جاتا۔بہت جلد یہ معلوم ہو گیا ۔کہ جو مریض اسپوڑٹڈ ویکسین وقت پر لگالیتے تھے وہ بچ جاتے تھے اور جنہوں نے اسلام آباد کی انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ کی بنائی ہوئی ویکسین حکومتی ہسپتالوں میں لگوائی تھی ۔اُن میں سے کوئی بھی زندہ نہ بچا تھا۔یہ معلوم نہ ہو سکا کہ ملکی ویکسین میں کوئی خرابی تھی یا اس کو مناسب حرارت پر نہ رکھنے کے باعث وہ بیکار ہو گئی تھی(آج کل ویکسین ہندوستان سے آرہی ہے۔اس کے موثر ہونے یا نہ ہونے کے بارے میں ہمیں کوئی علم نہیں)۔غریب مریضوں کی مدد یونٹ میں قائم کردہ فنڈ سے کی جاتی تھی۔

ایک اور بنوں سے آٹھ مریض اکھٹے آگئے۔جن میں بچے بھی تھے۔یہ لوگ اپنے گاؤں کی مسجد سے فجر کی نماز کے بعد نکلے ہی تھے کہ سامنے سے ایک بھیڑیا آتا دکھائی دیا۔اس جانور نے حملہ کرکے ان آٹھ لوگوں کو کاٹ لیا ۔خوش قسمتی سے یہ لوگ وقت پر لیڈی ریڈنگ ہسپتال آگئے اور ان کو ویکسین لگ گئی۔اور خدا کے فضل سے وہ سب زندہ بچ گئے۔انہوں نے بتایا تھا کہ اس بھیڑیے کو مار کر دفن کر دیا گیا تھا۔ڈاکٹر شاہ صاحب نے اُ ن سے پہلے روز کہدیا تھا کہ اس بھیڑیے کا سر منگوادو۔

چنانچہ جلد ہی اس بات پر عمل ہوا۔ معلوم کرنا تھا کہ وہ بھیڑیا ریبڈر تھا یا نہیں۔چنانچہ اس کے سر کو بوری میں ڈال کر یونٹ کے چپراسی دلبر کے ہاتھ ایک خط سمیت اسلام آباد کے ہیلتھ انسٹی ٹیوٹ کو بھیجا گیا۔ائک کے مقام پر پولیس نے اسے روکا۔ایک اہل کار نے بوری کی طرف اشارہ کرکے اس سے پوچھا ”اس میں کیا ہے ؟“دلبر نے کہا۔”بھیڑیے کا سر“۔اہل کار نے غصہ سے کہا “ہم سے ذوای کرتے ہو“۔دلبر نے کہا ۔”آپ دیکھ لیں“۔ایک اہل کار آگے بڑھا۔بوری کا منہ کھول کر اندر جھانکا تو چیخ مار کر پیچھے کو دوڑا۔چنانچہ دلبر اسلام آباد پہنچ گیا۔بعد میں انسٹی ٹیوٹ کی رپورٹ کے مطابق بھیڑیے کا دماغ نیگری بادینر سے بھرا ہوا تھا۔ یعنی کہ اس کو رے بیز کا مرض تھا۔

ایک اور واقعہ بھی قابل ذکر ہے ۔ان دنوں صوبہ کے گورنر فضل حق صاحب تھے۔اُن کی ایک دوست کو رجو چار سدہ کے خان تھے۔پاگل کتے نے کاٹ لیا تھا۔دوست نے ملکی ویکسین بھی لگوالی تھی۔بعد میں طبیعت خراب ہوئی تو ڈریکل اے یونٹ میں داخل ہو ئے ۔دوسرے ہی روز اُن کا انتقال ہو گیا۔

Rabies – Crazy Dog Bites.
صاحب گورنر کی طرف سے لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر جمیل احمد صاحب کو خط آیا کہ میرا دوست اپنے پیروں پر چل کر ہسپتال آیا تھا اور دوسرے دن فوت ہو گیا۔ اس کی وجہ کیا تھی؟۔جواب یونٹ کے پروفیسر صاحب نے لکھا۔رے بیز کے بارے میں بتایا اور یہ بھی کہ برطانوی حکومت کے عہد سے ہر بڑے شہرکی میونسیپلیٹی میں ایک شخص آوارہ کتے مارنے پر مقرر تھا اور اسے قیمہ اور سٹرکینین(Strychnine) ایک تیریلی دوا کے لئے رقم دی جاتی تھی۔قیمہ اور زہر کو ملا کر کتوں کو ڈالا جاتا تھا۔جس سے ان کی موت واقع ہو جاتی تھی۔آج کل وہ رقم لوگ اپنی جیب میں ڈال لیتے ہیں اور کتے مار افسروں کے گھر میں خدمت کرتے ہیں ۔گورنر صاحب نے اس سلسلے میں احکامات جاری کئے اور پشاور کے گلی کو چوں میں آوارہ کتوں کی لاشیں نظر آنے لگیں۔چند ہفتے تک یہ سلسلہ جاری رہا پھر حسب معمول حالات پہلی والی ڈگرپر آگئے۔
احتیاط:۔
رے بیز کے بارے میں ضروری معلومات تمام لوگوں تک پہنچانے کی کوشش کریں ۔کیا معلوم آپ کی اس کوشش کی وجہ سے کسی کی جان بچ جائے۔
اپنے علاقے سے آوارہ کتے بلیوں کا خاتمہ کریں۔اپنے پالتو جانوروں کے گلے میں پٹہ ڈالیں۔انہیں اپنے گھر کے اندر نہیں بلکہ باہر رکھیں۔اگر گھر سے باہر ساتھ لے جانا ہو تو گلے میں رسی ڈالیں اور اپنے قابو میں رکھیں۔
اپنے پالتو جانوروں کو موثر ویکسین لگوائیں کسی محتبر ملک کی بنائی ہوئی ۔اگر آپ کی ملازمت ایسی ہو کہ جانوروں کیساتھ تھی کام کرنا ہوتو خود کو بھی ویکسین لگوائیں۔

مخلوط نسل کے کتے (جیسے کتے اور بھیڑیے کے ملاپ سے پیدا شدہ)کے لئے ویکسین پر ابھی زیادہ کام نہیں ہوا۔اس لئے اُن کو مت پالیں۔خونخوار قسم کے کتے اکثر اپنے مالک کو بھی کاٹ لیتے ہیں۔
مردہ جانوروں کو چھونے سے بچیں۔مردہ پرندوں کے چھونے سے بھی رے بیز کے واقعات ہو ئے ہیں۔
اگر کوئی مشکوک جانور کاٹ لے تو فوراً زخم کو صابن اور پانی سے اچھی طرح اور چند بار دھوئیں اس کے بعد فوراً ویکسین لگوائیں۔اگر چہ زخم ایک زخم ایک خراش کی صورت میں ہی ہو۔وائرس جانور کی تھوک میں ہوتا ہے ۔اس لئے اس کے چاٹنے سے بھی خطرہ ہو سکتا ہے۔
ویکسین جتنی جلدی لگائی جائے اتنا زیادہ فائدہ ہو گا لیکن اگر چند دن دیر بھی ہو جائے تو بھی لگوالیں۔

Rabies – Crazy Dog Bites.
ریبڈ جانور کو بند رکھیں۔اگر دس دن کے اندر مر جائے تو یقینی طور پر ریبڈ تھا۔اگر بچ جائے تو بھی خطرہ ختم نہیں ہوا کیونکہ نئی ریسرچ کے مطابق بعض ریبڈ جانور دیر تک زندہ رہ سکتے ہیں اس لئے ہر کاٹنے والے جانور کو ریبڈ ،سجیس اگر اسے موثر ویکسین نہیں لگی ہوئی۔
ویکسین:۔ ملکی اور ہندوستانی ویکسین کی افادیت کے بارے میں یقین سے کچھ نہیں کہا جا سکتا۔اس لئے فرانس یا سوئٹزر لینڈ کی بنی ہوئی ویکسین ہی استعمال کریں۔جو کہ صحیح درجہ حرارت میں رکھی گئی ہو ۔
بڑوں اور بچوں کے لئے مقدار یکساں ہے۔بڑوں کو انجکشن بازو کے اوپر ی حصے ڈیلٹو ئڈنسل میں لگاتے ہیں اور بچوں کو ران کے سامنے اور بیر دنی حصے میں۔

عموماً چار انجکشن لگتے ہیں۔پہلے دن پھر ساتویں ۔اکیسویں اور اٹھائیسویں دن پہلے دن امیو نو گلوبولین کا انجکشن بھی لگنا چاہئے۔جو زخم کے قریب آس پاس لگتا ہے اگر اس سے کچھ بچ جائے۔تو وہ بھی مسل (muscle)میں لگا دیں۔
آخر میں میری تمام پاکستانیوں سے درخواست ہے۔کہ رے بیز کے بارے میں علم زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچا دیں۔اور حکومت ۔محکمہ صحت ۔انتظامیہ اور میڈیا سب ملکر کوشش کریں کہ آج کے بعد رے بیز سے کوئی انسانی جان ضائع نہ ہو اور یہ بیماری ہمارے ملک سے ختم ہو جائے۔

Rabies – Crazy Dog Bites. 

Source UrduPoint.

Tags
Show More

Mushahid Hussain

My Name is Mushahid Hussain Alvi I am a Web Designer

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Back to top button
Close
%d bloggers like this: