Weight Loss

obesity

obesity

obesity

موٹاپا نہ صرف ظاہری شخصیت کو تباہ کردیتا ہے بلکہ یہ امراض کی جڑ بھی ثابت ہوتا ہے کیونکہ اس سے ذیابیطس ، بلڈپریشر ، امراض قلب اور فالج غرض کہ لاتعداد بیماریوں کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔ اسی لیے تو کہا جاتا کہ موٹاپا بذات خود کئی بیماریوں کا باعث ہے۔ اب یہ ایک بیماری کاباعث بن بھی رہا ہے۔ ایک حالیہ تحقیق کے مطابق ایسے افراد جن کا وزن زیادہ ہوتا ہے اُن کا دماغ عمر کے مقابلے میں دس سال زیادہ بوڑھا ہوتاہے۔

انسانی دماغ عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ معلومات کی رسائی والے حصے میں قدرتی طور پر سفید مواد ختم ہونے لگتا ہے لیکن کیمبرج یونیورسٹی کی تحقیقی ٹیم کے مطابق دماغ میں اس مواد کا ختم ہونا اضافی وزن سے بڑھ جاتا ہے۔ اسی باعث زیادہ وزن والے 50سالہ شخص کا دماغ ایک 60سالہ دبلے شخص کے برابر ہوتا ہے۔

تحقیق سے یہ انکشاف ہوا ہے کہ کیسے اضافی وزن دماغ کو متاثر کرتا ہے۔

کیمبرج سینیٹرفارایجن اینڈ نیوروسائنسس نے اس تحقیق کے دوران 20سے 87سال کی عمر والے 473 افراد کا معائنہ کیا اور ان افراد کو دو کیٹیگری موٹے اوردبلے میں تقسیم کیا گیا۔
طبی جریدے جرنل آف نیوروبیالوجی میں شائع ہونے والی تحقیق کے نتائج کے مطابق موٹے اور سمارٹ افراد کے دماغ میں سفید مواد کا حجم مختلف ہے۔ جبکہ زیادہ وزن کے حامل افراد میں اپنے ہم عمر پتلے افراد کے مقابلے میں سفید موادکم ہے۔
تحقیق ڈاکٹر لیزارونن کا کہنا ہے کہ ابھی یہ واضح نہیں ہوا ہے کہ موٹاپا دماغ کو نقصان پہنچاتا ہے یا نہیں۔ ماہرین کاکہنا ہے کہ یہ فرق درمیانی عمر والے افراد سے لے کر بوڑھے افراد میں پایا جاتاہے۔ جس سے یہ پتہ چلتا ہے کہ اس عمر کے دوران انسانی دماغ کو زیادہ خطرہ لاحق ہوتا ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ موٹاپے سے دماغ کی بظاہر ساخت میں تبدیلی تو نوٹ کی گئی لیکن اس سے معلومات یاسمجھ بوجھ پر کوئی فرق محسوس نہیں ہوا ہے۔اس لیے ایسے افراد پر مزید کام کرنے کی ضرورت ہے تاکہ یہ معائنہ کیاجائے کہ ڈیمنشیا جیسے امراض کیسے شروع ہوتے ہیں۔
ماہرین کے مطابق موٹاپا ایک بہت پیچدہ اور الجھا ہوا مسئلہ ہے ہم اس کے بہت سے مضر اثرات سے واقف ہیں لیکن اس سے دماغ پرکیا اثر پڑتاہے اور دماغ موٹاپے کوکیسے لیتا ہے ہم اس کو جاننے کے ابتدائی مرحلے میں ہیں۔

ریسرچر پروفیسر سڈل فاروقی کاتجزیہ ہے کہ یہ جاننا بھی ضروری ہے کہ دماغ میں وزن بڑھنے سے ہونے والی تبدیلی یاوزن میں کمی کرنے سے صحیح ہو سکتی ہے۔یہ ہمارے لیے ایک نقطہ ہے کہ وزن، صحت ورزش کے انسانی دماغ اور یاداشت پرکیا اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

کم وبیش سبھی کومعلوم ہے کہ موٹاپے اب ایک عالمی وباء بن چکا ہے ۔ وزن میں کمی کا کوئی جادوئی حل نہیں بلکہ طرززندگی میں تبدیلی ہی سے آپ اپنی شخصیت میں جادوئی تبدیلی لاسکتے ہیں۔ ورنہ کہیں ایسا نہ ہو لوگ آپ کو موٹا موٹا کہتے موٹے دماغ والا ہی کہنا شروع کردیں۔

Obesity not only removes the personality, but it also causes the root of the disease, because it also increases the risk of diseases such as diabetes, blood pressure, acne and fluid. That is why it is said that obesity itself causes many diseases. Now it is also a disease. According to a recent research, those who are overweight, their brain is older than ten years old.

As per the human brain aging, naturally white content appears to end in the information accessible section, but according to the Cambridge University research team, the content of the brain increases the excess weight. That’s why 50-year-old man’s brain is like a 60-year-old man.

Research has revealed how additional weight affects brain.

Cambridge Centrifarage and Neurosecesis examined 473 people aging 20 to 87, and those individuals were divided into two degrees and thick.
According to the results of research published in the journal of Journal of Neurobiology, the volume of white material in the brain of smart and smart people is different. While those who are overweight, white material is lower than those of their age-old men.

Researcher Dr. Lisbonnton says it is not yet clear whether obesity damages the brain or not. Experts say that this difference is found from older people in older people. Which shows that during this age human risk is more vulnerable.

Researchers say that the change in apparently structural structure of the brain has been noted but this does not make any difference to the information or the burden.

Therefore, those people need to do more work so that inspect how diseases like dementia begin.

According to experts, obesity is a very complicated and confused problem. We are aware of many of its implications, but it has an effect on brain and the brain takes cookies. We are in the early stage to know it.

Researcher, Sodal Farooqi, is a catastrophic that it is important to know that by reducing the weight loss in mind, it can be correct by the weight loss.

It is a point to us that the human minds of weight, healthcare, and traditional effects are common.

The lesser understanding is all that MotoPop has now become a global disaster. There is no magic solution to weight loss, but by changing the style you make a magical change in your personality. Otherwise, people do not want to talk to you with a smart mind.

Tags

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
Close
Close