Health tips

Cheese Energy Too Enjoyable

Cheese Energy Too Enjoyable

Cheese Energy Too Enjoyable

Cheese (CHEESE) is an essential diet of meat and meat. It contains oily and nitrogenous ingredients too. It has a strong stomach and intestines. Its food is far from the country’s remote areas It is limited to the extent that the body gets energy and heat in the body. The cheese is consumed on fat or a loaf, which creates energy and heat. Life is lifted everywhere on the leave of the people.
Peacock leaves on the trees. Never leaves their head from grass ground. The fishermen turn around the mud and the sticks and once again fresh milk seems to be nice, and it benefits people from these areas. Women tear their milk by tearing the milk or tied the yogurt and save the surviving solid ingredients in the form of lidos.

Cheese tasting milk and cheese are called cheese gutter cheese (change cheese). Our ours and in Europe etc. are considered to be more useful. An important cheese feature of cheese than a cow is that it should be kept for a long time. They can eat them together with different years or vegetables.
When making cheese, it adds itself to the best work of salts, when it comes to preparing sweets.
Then it can not be kept for a long time. Cheese Energy Too Enjoyable
Household cheese is sold in Europe as “change cheese”, it is called “chaos chaos”, as it is now not prepared for a long time. Its high-teamed milk is boiled well Thus. This is largely empty from the top concentrated corrugated oil components and the Hitin A (vitamins A).
There are many types of manufactures in Europe, some of which are also closed in the boxes and are sold very expensive.
If you are cheese-made cheese, you can use it in different ways instead of eating with a safari, in different ways, such as cooking it with trashes, plus essential proteins. Alphabets and minerals can also be found.

The Cheese Purse
These items will be useful for making cheese soups: a small flower cabbage, one drink fresh and soft carrots, medium size onion one number, 4-grounded beef meat-missed water (250 grams), slightly black pepper, A piece of pearl or palm sugar, garlic juice 3-2 and cheese a pie, cabbage and carrots well, and cut it tightly.
Then, mix on the elasticity of the onion and meat or dal, add the water to the straw. Add garlic, sharp potatoes, sugar, salt and pepper, and cook on the light strain. When vegetable leaves well, sharp leaves Take out a piece of sugar and take cheese in a bender with a slice of cheese and refresh it again and again, again and again, refresh fresh leaves.
Various dishes of cheese can also be prepared from cheeses, which can provide health care as well as new flavors.
Women living in cities can also prepare cheeses at home. Deteriorated milk is thrown in ineffective homes. Chubby women prepare cheese from this milk and prepare nutrients for your family.
We have dry milk now easily in the cities. It can also be done from the heart, if it does not have fresh milk utensils, it can still get some nutrition. Upper breast milk is also useful for blood pressure and heart patients due to the cheese of cheese. This cheese does not even increase weight.

پنیر(CHEESE)ایک مقوی غذا اور گوشت کا عمدہ نعم البدل ہے۔اس میں روغنی اور نائٹروجنی اجزاء بہ کثرت پائے جاتے ہیں ۔اس سے معدہ اور آنتیں قوی ہوتی ہیں ۔اب اس کا کھانا ملک کے دُور دراز کو ہستانی علاقوں کے رہنے والوں کی حد تک محدود ہو کررہ گیا ہے ۔پنیر توس یا روٹی پر لگا کر کھایا جاتا ہے ،جس سے جسم میں توانائی اور حرارت پیدا ہوتی ہے۔جاڑوں کے رخصت ہوتے ہی ہر طرف زندگی جاگتی ہے ۔درختوں پر شگوفے پھوٹتے ہیں ۔نئی گھاس زمین سے اپنا سر نکالتی ہے ۔مویشی سبزہ زاروں اور چراگاہوں کا رخ کرتے ہیں اور ایک بار پھر تازہ دودھ ،دہی خوب ملنے لگتا ہے ۔اس سے ان علاقوں کے لوگ خوب فائدہ اٹھاتے ہیں۔ خواتین دودھ کو پھاڑ کر یا دہی کو کپڑے میں باندھ کر اس کا پانی خارج کردیتی ہیں اور بچ جانے والے ٹھوس اجزاء کو لڈوؤں کی شکل میں Cheese Energy Too Enjoyable محفوظ کرلیتی ہیں۔
دودھ کو پھاڑ کر تیار کیاجانے والا پنیر خانہ ساز پنیر(کاٹج چیز)کہلاتا ہے ۔ہمارے ہاں اور یورپ وغیرہ میں بھی اسے زیادہ مفید سمجھا جاتا ہے۔کھوئے کے مقابلے میں پنیر کی ایک اہم خصوصیت یہ ہے کہ اسے طویل عرصے تک رکھا جا سکتا ہے ۔نیز اسے مختلف سالنوں یا سبزیوں کے ساتھ بھی ملا کر کھا سکتے ہیں ۔
پنیر بناتے وقت اس میں نمک مرچ کے اضافے سے یہ خود ایک بہترین سالن کاکام دیتا ہے ،جب کہ کھویا بالعموم مٹھائیوں کی تیاری میں کام آتا ہے ۔پھر اسے دیر تک رکھا بھی نہیں جا سکتا۔
یورپ میں خانہ ساز پنیر ”کاٹج چیز“کے نام سے فروخت کیا جاتا ہے۔یہ برائے نام ہی”کاٹج چیز“ہوتا ہے ،کیوں کہ اب اسے پرانی ترکیب سے تیار نہیں کیا جاتا۔اسے بالائی اُترے ہوئے دودھ کو خوب اُبال کر تیار کرتے ہیں ۔اس طرح یہ بالائی میں شامل مقوی روغنی اجزاء اور حیاتین الف(وٹامن اے)سے بڑی حد تک خالی ہوتا ہے ۔یورپ میں اس کی کئی اقسام تیار کی جاتی ہیں ،جن میں سے کچھ ہمارے ہاں بھی ڈبوں میں بند آتی ہیں اور بہت مہنگے داموں فروخت کی جاتی ہیں۔
اگر آپ کو دیسی طریقے پر تیار کردہ پنیر میسر ہوتو اسے تو س یاروٹی کے ساتھ کھانے کے بجائے مختلف انداز میں استعمال کرکے اس کے فوائد حاصل کیجئے،مثلاً آپ اسے ترکاریوں کے ساتھ پکا کر کھائیں توجسم کو ضروری لحمیات (پروٹینز)کے علاوہ اہم حیاتین اور معدنی نمک بھی مل سکتے ہیں۔
پنیر کا مقوی شوربا
پنیر کا شوربا بنانے کے لیے یہ اشیاء در کار ہوں گی:ایک چھوٹی پھول گوبھی،ایک پاؤ تازہ اور نرم گاجریں،درمیانے سائز کی پیاز ایک عدد،4پیالی اُبلے ہوئے گوشت یادال کا پانی(250گرام) ،تھوڑی سی سیاہ مرچ پسی ہوئی،ایک تیز پات یا دار چینی کا ٹکڑا ،لہسن کے جوئے 3-2اور پنیر ایک پاؤ،گوبھی اور گاجروں کو اچھی طرح دھو کر باریک ٹکڑے کرلیجیے۔پھر پیاز کے لچھے اور گوشت یا دال میں حسب ضرورت پانی ملا کر دیگچی چولھے پر چڑھادیجیے۔اس میں لہسن ،تیز پات یادار چینی،نمک اور کالی مرچ ملا کر ہلکی آنچ پر پکنے دیجیے۔جب سبزیاں خوب گل جائیں،تیز پات یا دار چینی کے ٹکڑے نکال کر پنیر کے ساتھ بلینڈر میں خوب اچھی طرح گھوٹ لیجیے اور دوبارہ گرم کرکے ہرے دھنیے کی تازہ پتیاں چھڑک کر پیش کیجیے۔پنیر سے اسی طرح مختلف قسم کے دیگر پکوان بھی تیار کیے جاسکتے ہیں،جو نئے ذائقے کے علاوہ صحت وتوانائی مہیا بھی کر سکتے ہیں۔
شہروں میں رہنے والی خواتین بھی گھر میں پنیر تیار کر سکتی ہیں۔اکثر گھروں میں پھٹنے والے دودھ کو پھینک دیا جاتا ہے ۔سگھڑ خواتین اس دودھ سے بھی پنیر تیار کرکے اپنے خاندان کے لیے مقوی غذائیں تیار کر لیتی ہیں۔ہمارے ہاں شہروں میں اب تو خشک دودھ بہ آسانی ملتا ہے ۔دہی سے بھی یہ کام لیا جا سکتا ہے ،اگر چہ اس میں تازہ دودھ کی سی افادیت تو نہیں ہوگی ،پھر بھی اس سے کچھ نہ کچھ غذائیت ضرور مل سکتی ہے ۔بغیر بالائی والے دودھ کا پنیر چکنائی سے مبراہونے کی وجہ سے بلڈ پریشر اور قلب کے مریضوں کے لیے بھی مفید ثابت ہوتا ہے ۔اس پنیر سے وزن بڑھنے کا امکان بھی نہیں رہتا۔

source UrduPoint.

 

Show More

Mushahid Hussain

My Name is Mushahid Hussain Alvi I am a Web Designer

Related Articles

One Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Check Also

Close
Back to top button
Close
%d bloggers like this: