Beauty Tips

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

You have seen patients in hospitals who suffer from pain due to fire. Their shaved face becomes sore, so they begin to hide their faces or body. Such patients are psychologically victimized or depressed. In fact, plastic surgery has developed a lot of progress and the risk of dryness, such as fire-fed patients, makes it easier to get relief. That’s why it’s a dream for patients in Patriot Aziz.

Those patients who do not get proper treatment, they are alive with their stain and fat skin, or they are handed with life. However, a glimpse of hope for the people with fire has now emerged that local Pakistani Doctors and scientists have announced that they will prepare artificial skin massively in the personal laboratory.

There has been a breakthrough in this matter because there has been an agreement between the University of Health Sciences and the two Justified Associations of Pakistan. Early such artificial skin accounts for $ 900 (127440 rupees) per inch It was imported from, but now the same type of human skin will be prepared in one thousand rupees in Pakistan.
Suitable patients with this artificial skin will be able to recover.
They will also include patients who have burned up to 70 percent. The process of artificial skin early on human skin started in Pakistan for the first time in 2015, but it was experimental, now the skin is being developed widely, which has a large number of patients benefited. Will be able to
Professor Javed Ikram, Vice Chancellor of the University of Health Sciences, said that there are various reasons for burning dead, which include various types of infections, water emissions, and minerals from the affected person’s body. There are no discounts for fasting.

He further added that patients’ rates are higher than they have deteriorated to 90 percent instead of 70%. When our artificial skin begins to grow widely in our own laboratory, the discomfort of the affected people decreases by 20%. Will and patients’ chances of surviving will increase.
In fact, the artificial skin that is imported from non-country is very expensive, especially for middle-class patients, so they avoid avoiding treatment and as a consequence reach death. Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

He reminded the oil tanker’s accident at Ahmad Parshekashi, saying that many deaths in this accident were due only because of the artificial skin in our hospitals not available in a large number. Synthetic skin prepared in our laboratory Some that would be very cheap compared to the skin imported from Europe and America, but its quality would be as soon as possible. Artificial Skin-Hope for Healthy Patients
The fact is that the soonest we prepare in Pakistan, it will prove to be better than the imported skin in many ways. Here we were tested in the US’s largest body of health and they had Appreciating it, he attributed to Suffer patients. We used this as soon as possible on many patients and they were treated well.

Professor Javed Akram explains ways of change of skin and said that there are two ways: One method is called technological and other disciplines. Technically we have made 17 inventions, including artificial skin, human eye-thin, kidney Cells (cells) and “intranet injection” are applied to patients with gastrointestinal liver (hepatitis).
The science work is to invent things in the laboratory, but the fact is when these things are used on patients and they are recovered.
Dr. Javed Ikram also mentioned the barriers that are involved in the preparation of artificial skin. The biggest problem is the rules. There are difficulties in registering events, namely, that we have prepared it soon, but it Did not understand which organization will register it? Which pharmaceutical company will manufacture it on a commercial scale and bring it to the market for sale.

In this case, we initially came very tremendously. The drug mafia, which is importing artificial skin and various types of deposits from foreign countries, would have lost its interests, so he started obstacles in our work. Apart from this, the medication we call for chemicals is not available or its artificial deficiency, which has created barriers in our work.

I am very grateful to the Supreme Court of Pakistan that he had Somuoto Action on this matter (judicial authority to take any action against him if he saw any corruption, he would not wait to take any other person) and formed a committee. That he should monitor matters. We have succeeded with this judicial decision, we were saved from the conflicts and started developing artificial skin.
This relieved patients’ treatment methods.
The doctor prepared by Dr. Javed Ikram and his colleagues has sent the Drug Regulatory Authority of Pakistan (DRAP) to the Korzester. It is likely that its positive results will be resolved and the problem of dry patients will be resolved soon.
The name of the Pakistan pharmaceutical Association, based on the agreement, has approved that 20 pharmaceutical companies can prepare this synthetic skin.
In this regard, the medicines prepared for treatment will be provided at cheap rates and can also be exported if needed.

Therefore, affordable skin preparation could be possible.

Dr. Rauf explained the earliest detail, “We get a small piece of skin in eight days, because our laboratory is small, so we can now work on a small scale.”
Like America and Europe, we do not have big, modern and personal laboratories, otherwise, we would have met the needs of the country. Haseeb Khawaja, the representative of Pakistan’s pharmaceutical association, said: “Now we are under an agreement under artificial skin from Canada and Spain. Machinery is fitting to prepare.
Our laboratory will have international standards of skin care, whether it is an eye-colored kidney cell. It is difficult to tell how long artificial skin will be prepared, but whenever it is The price will be very low. “

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

آپ نے اسپتالوں میں ایسے مریض دیکھے ہوں گے،جو آگ سے جھلس جانے کی وجہ سے تکلیف واذیت میں مبتلا ہوتے ہیں ۔ان کے جھلسے ہوئے چہرے بدنما ہو جاتے ہیں ،لہٰذا وہ اپنا چہرہ یا جسم چھپانے لگتے ہیں۔ ایسے مریض نفسیاتی طور پر آزردگی یا مایوسی کا شکار ہو جاتے ہیں ۔باوجود اس کے کہ موجودہ دور میں پلاسٹک سرجری نے کافی ترقی کرلی ہے اور سوختہ،یعنی آگ سے جھلسے ہوئے مریضوں کا علاج بہ آسانی ہوجاتا ہے ،لیکن اس میں خرچہ بہت آتا ہے ،اس لیے یہ وطن عزیز میں مریضوں کے لیے ایک خواب سابن کررہ گیا ہے۔
جن مریضوں کا مناسب علاج نہیں ہو پاتا،وہ مجبوراً اپنی داغ دار اور بدنما جلد کے ساتھ زندہ رہتے ہیں یا پھر زندگی سے ہاتھ دھوبیٹھتے ہیں ۔بہر حال آگ سے جھلسے ہوئے مریضوں کے لیے اب اُمید کی ایک کرن روشن ہوئی ہے کہ مقامی پاکستانی ڈاکٹروں اور سائنس دانوں نے یہ اعلان کیا ہے کہ وہ بڑے پیمانے پر ذاتی لیبارٹری میں مصنوعی جلد تیار کریں گے۔

اس معاملے میں پیش رفت ہوئی ہے ،کیوں کہ اس سلسلے میں یونی ورسٹی آف ہیلتھ سائنسز اور پاکستان کی دو اساز ایسوسی ایشن کے درمیان ایک معاہدہ طے پا گیا ہے ۔پہلے ایسی مصنوعی جلد غیر ملک سے 900 ڈالر (127440روپے)فی انچ کے حساب سے درآمد کی جاتی تھی ،لیکن اب اسی قسم کی انسانی جلد ایک ہزار رُوپے میں پاکستان ہی میں تیار ہو سکے گی۔
اس مصنوعی جلد سے بڑے پیمانے پر سوختہ مریض شفایاب ہو سکیں گے۔ان میں وہ مریض بھی شامل ہوں گے ،جن کاجسم 70فیصد تک جل چکا ہو۔ انسانی جلد کی جگہ مصنوعی جلد لگانے کا عمل پاکستان میں پہلی بار مقامی سطح پر 2015ء میں شروع ہوا،تاہم یہ تجرباتی طور پر کیا گیا تھا،اب اس جلد کو وسیع پیمانے پر تیار کیا جارہا ہے،جس سے مریضوں کی ایک بڑی تعداد مستفید ہو سکے گی۔
یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنس کے وائس چانسلر پروفیسر جاوید اکرام نے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ جل کر مرنے کی مختلف وجوہ ہوتی ہیں ،جن میں مختلف قسم کے تعدیے(انفیکشنز)،خلیوں سے پانی کا اخراج اور متاثرہ شخص کے جسم سے معدنیات(منرلز)کا تیزی سے ضائع ہو نا شامل ہیں۔
انھوں نے مزیدکہا کہ مریضوں کی شرح اموات اس بنا پر زیادہ ہوتی ہے کہ وہ 70فیصد کے بجائے90 فیصد تک جھلس چکے ہوتے ہیں۔جب ہماری اپنی لیبارٹری میں مصنوعی جلد وسیع پیمانے پر تیار ہونے لگے گی تو متاثرہ افراد کی تکلیف 20فیصد تک کم ہو جائے گی اور مریضوں کے بچنے کے امکانات بڑھ جائیں گے۔
دراصل غیر ملک سے درآمد کی جانے والی مصنوعی جلد بہت مہنگی پڑتی ہے،خاص طور پر متوسط طبقے کے مریضوں کے لیے،لہٰذا وہ علاج کرانے سے گریز کرتے ہیں اور نتیجے کے طورپر موت کے منھ میں پہنچ جاتے ہیں۔
انھوں نے احمد پورشرقیہ میں تیل کے ٹینکر کے حادثے کو یاد کرتے ہوئے بتایا کہ اس حادثے میں بہت سی اموات صرف اس وجہ سے ہوئیں،کیوں کہ ہمارے اسپتالوں میں مصنوعی جلد بڑی تعداد میں دستیاب نہیں تھی ۔ہماری لیبارٹری میں تیار کردہ مصنوعی جلد ہر چند کہ یورپ اور امریکا سے درآمد شدہ جلد کے مقابلے میں نہایت سستی ہوگی ،مگر اس کا معیار اُسی جلد جیسا ہو گا۔حقیقت یہ ہے کہ ہم جو جلد پاکستان میں تیار کریں گے،وہ کئی لحاظ سے درآمد شدہ جلد سے بہتر ثابت ہو گی۔یہاں تیار ہونے والی جلد کو ہم نے امریکا کے صحت کے سب سے بڑے ادارے میں ٹیسٹ کرایا تھا اور انھوں نے اس کی تعریف کرتے ہوئے اسے سوختہ مریضوں کے لیے موزوں ومفید قرار دیا۔ہم نے تجربے کے طور پر اس جلد کو بہت سے مریضوں پر  Artificial Skin-Hope for Healthy Patientsاستعمال کیا اور انھیں شفایابی نصیب ہوئی۔
پروفیسر جاوید اکرم نے جلد کی تبدیلی کے طریقوں کی وضاحت کرتے ہوئے بتایا کہ اس کے دو طریقے ہیں:ایک طریقہ تکنیکی اور دوسرا انضباطی کہلاتا ہے ۔تکنیکی طور پر ہم نے 17ایجادات کی ہیں ،جن میں مصنوعی جلد ،انسانی آنکھ کی پتلی،گردے کے خلیے(سیلز)اور ”انٹر فیرن انجکشن“(INTERFERON INJECTION)،جوسوزشِ جگر (ہیپاٹائٹس)کے مریضوں کو لگایا جاتا ہے ،شامل ہیں ۔سائنس دانوں کا کام یہ ہے کہ وہ لیبارٹری میں چیزیں ایجاد کریں ،مگر اصل بات تب بنتی ہے ،جب ان چیزوں کو مریضوں پر استعمال کیا جائے اور انھیں شفایابی حاصل ہو۔
ڈاکٹر جاوید اکرام نے ان رکاوٹوں کا بھی تذکرہ کیا،جو مصنوعی جلد کی تیاری میں انھیں درپیش ہیں ۔سب سے بڑی دشواری قواعد وضوابط کی ہے۔پھر رجسٹر یشن کے معاملے میں دشواریاں حائل ہیں،یعنی ہم نے جلد تو تیار کرلی ،لیکن یہ سمجھ میں نہیں آیا کہ کون سا ادارہ اسے رجسٹر کرے گا؟کون سی دواساز کمپنی اسے تجارتی پیمانے پر تیار کرے گی اور فروخت کے لیے بازار میں لائے گی۔
اس ضمن میں ابتدائی طور پر تو ہمیں بہت دقت پیش آئی ۔وہ ڈرگ مافیا ،جو مصنوعی جلد اور مختلف قسم کی ادویہ بیرونی ممالک سے درآمد کررہی ہے ،اس کے مفادات ختم ہو جاتے ،لہٰذا وہ ہمارے کام میں رکاوٹیں ڈالنے لگی۔اس کے علاوہ ہم جو دوایا کیمیکل طلب کرتے ،وہ دستیاب نہیں ہوتا یا اس کی مصنوعی قلت پیدا کردی جاتی ،جس سے ہمارے کام میں رکاوٹیں پیدا ہوئیں۔
میں سپریم کورٹ آف پاکستان کا بہت شکر گزار ہوں کہ اس نے اس معاملے پر سوموٹو ایکشن(عدالتی اختیار کہ وہ کوئی بدعنوانی دیکھے تو اس کے خلاف خود اقدام اٹھائے،یہ انتظار نہ کرے کہ کوئی دوسرا فرددعوادائرکرے)لیا اور ایک کمیٹی تشکیل دے دی کہ وہ معاملات کی نگرانی کرے۔اسی عدالتی فیصلے سے ہمیں کامیابی ہوئی،ہم الجھنوں سے نجات پا گئے اور مصنوعی جلد تیار کرنی شروع کردی۔اس سے مریضوں کی شفایابی کی راہ میں حائل رکاوٹیں دُور ہو گئیں۔
ڈاکٹر جاوید اکرام اور ان کے ساتھیوں نے جو جلد تیار کی ہے،وہ ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی آف پاکستان (DRAP)کورجسٹر کرنے کے لیے بھیج دی ہے۔اُمید ہے کہ اس کے مثبت نتائج نکلیں گے اور سوختہ مریضوں کا مسئلہ جلد حل ہو جائے گا۔
معاہدے کی بنیاد پر پاکستان کی دواساز ایسوسی ایشن کے نام زد نمایندے نے اس بات کی منظوری دی ہے کہ 20دواساز کمپنیاں اس مصنوعی جلد کو تیار کر سکتی ہیں ۔اس سلسلے میں علاج کے لیے تیار ہونے والی ادویہ سستے نرخوں پر مہیا کی جائیں گی اور ضرورت پڑنے پر برآمد بھی کی جاسکیں گی۔

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients
مذکورہ جلد کی تیاری میں ڈاکٹر رؤف احمد نے بھی بہت اہم کردار اداکیا ہے،جو لاہور جناح اسپتال کے اس شعبے میں کام کرتے ہیں،جو جلنے والے مریضوں کے لیے مخصوص ہے ۔ڈاکٹر رؤف احمد جو حیاتیات جرثومی(MICROBIOLOGY) میں پی ایچ ڈی ہیں ،انھوں نے اخباردی ایکسپریس ٹری بیون کو مصنوعی جلد کے بارے میں بتایا کہ یہ مریض کے جسم کی اس کھال سے تیار کی جاتی ہے ،جو آپریشن کے دوران استعمال نہیں کی جاتی ،یعنی بچ جاتی ہے یا پھر جانوروں کی کھالوں سے مدد لی جاتی ہے ،مثلاً گائے اور بھینس وغیرہ۔
پہلے مرحلے میں جلد کی اوپری تہ کو کیمیائی اجزاء سے صاف کیا جاتا ہے ،جسے طبی اصطلاح میں ”ڈی ایپی ڈرملائزیشن “(DE-EPIDERMALISATION)کہتے ہیں ۔دوسرے مرحلے میں مریض کے جسم کا وہ حصہ ،جو متاثر ہو چکا ہوتا ہے ،اُسے”ڈی سیلولرائزیشن“
(DEEPIDERMALISATION)کہاجاتا ہے ۔مریض کو ان دونوں مراحل سے گزارنے کا صرف ایک ہی مقصد ہوتا ہے اور وہ یہ کہ اس کی جلد کو وائرسوں سے بالکل پاک کردیا جائے،تاکہ جسم کا مدافعتی نظام نئی جلد کے ٹکڑوں کو قبول کرلے۔تیسرے مرحلے میں استعمال کی جانے والی جلد کو چراثیم سے پاک کیا جاتا ہے ۔یہ سارے کام مشینوں سے کروائے جاتے ہیں۔
ڈاکٹر رؤف احمد کے مطابق مصنوعی جلد کو ٹھوس حالت میں ایک سال کے لیے محفوظ رکھا جا سکتا ہے ،جب کہ کولڈ اسٹوریج میں چھے مہینے کے لیے رکھی جاسکتی ہے ۔جب اسے استعمال کرنا ہوتا ہے تو مختلف محلولوں کے ذریعے اسے پتلا کیا جاتا ہے ۔پھر جب اسے مریض کے جسم کی متاثرہ جگہ پر رکھا جاتا ہے تو یہ چپک کر جسم کا حصہ بن جاتی ہے۔پھر وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ایک قدرتی جھلی اس کے اوپر آجاتی ہے اور اس طرح وہ جلد کے قدرتی رنگ میں گھل مل جاتی ہے۔
ڈاکٹر رؤف احمد نے بتایا کہ لوگوں کے ذہنوں میں یہ سوال پیدا ہو سکتا ہے کہ امریکی سائنس دانوں کے مقابلے میں پاکستانی سائنس داں نے یہ مصنوعی جلد کیسے سستی تیار کرلی؟اصل میں یہ محض ان کیمیائی اجزاء اور کیمیائی مرکبات کا فرق ہے،جو مصنوعی جلد کو تیار کرنے میں کام آتے ہیں ،وہ یہاں سستے ملتے ہیں ،اس لیے سستی جلد کی تیاری ممکن ہو سکی۔
ڈاکٹر رؤف نے جلد سے متعلق تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ ہم آٹھ دنوں میں جلد کا ایک چھوٹا سا ٹکڑا تیار کر پاتے ہیں،اس لیے کہ ہماری لیبارٹری چھوٹی سی ہے ،لہٰذا ابھی ہم چھوٹے پیمانے پر کام کر سکتے ہیں۔
امریکا اور یورپ کی طرح ہمارے پاس بڑی ،جدید اور ذاتی لیبارٹریاں نہیں ہیں ،ورنہ ہم ملکی ضروریات پوری کر دیتے۔پاکستان کی دوا ساز ایسوسی ایشن کے نمائندے حسیب خاں نے بتایا:”اب ہم ایک معاہدے کے تحت کینیڈا اور اسپین سے مصنوعی جلد تیار کرنے کے لیے مشینری منگوار ہے ہیں۔ہماری لیبارٹری میں جلد تیار کرنے والی ساری چیزیں بین الاقوامی معیار کی ہوں گی،چاہے وہ آنکھ کی پتلی ہویا گردے کے خلیے ۔ابھی یہ بتانا دشوار ہے کہ بڑے پیمانے پر مصنوعی جلد کب تک تیار ہو سکے گی،لیکن جب بھی ہوگی،اس کی قیمت بے حد کم ہو گی۔“

Artificial Skin-Hope for Healthy Patients

Source UrduPoint.

Tags
Show More

Mushahid Hussain

My Name is Mushahid Hussain Alvi I am a Web Designer

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Back to top button
Close
%d bloggers like this: